Home > Saraiki Culture > Make new provinces only on administrative grounds?

Make new provinces only on administrative grounds?

By Abdul Nishapuri

In today’s The News, I read an interesting article on the possibility of new provinces by Saleem Safi. It seems that after months and years of effectively campaigning for the case of Pakhtunkhwa, Saleem Safi has suddenly realized that “In the current scenario, the only option that seems feasible and probably acceptable to the democratic forces is declaring the administrative Divisions in all federating units as new provinces.”

In particular, the author demonstrates inadequate understanding of the Saraiki waseb, for example, when he writes that: “…Saraiki-speaking Dera Ismail Khan will become small ethnic enclave and not meet the characteristics of province.”

The author may care to spare a few moments in reviewing and understanding the geographical proximity (see the above map) and size of the population (at least 25 million) of all Saraiki areas (in Khyber Pakhtunkhwa, Punjab and other provinces) and then comment if the Saraiki waseb does or does not meet the characteristics of a province?

How long will our mainstream journalist ignore the Saraiki culture and identity and the Saraikis’ demand for provincial autonomy?

Here is Saleem Safi’s article from The News, April 26, 2010:

Make new provinces

Demands for creation of new provinces, which have been made for many decades, have been spurred by the renaming of one of the federating units. The idea cannot be rejected out of hand, for many reasons.

These include huge differences in size, economic disparities, distortions in distribution of resources, ethnic deprivations and the local population’s little or no say in the affairs of the federation. This situation has created bitter prejudices in smaller provinces.

The demands could be accepted if creation of new provinces could facilitate smooth running of the country, create harmony among people and help mitigate ethnic, linguistic, and other prejudices among the federating units. However, most of the proponents of creation of new provinces demand division of existing provinces along historical, ethnic, linguistic and geographical fault lines, which is destined to enflame ethnic tensions.

If Bahawalpur demands the status of a province on the basis of its separate status in the British colonial India, then opponents may very well make the argument that the history of the region does not stop at that point of time. It goes farther to the times of the emergence of Muslim rule and, before that, Hindu kingdoms in the subcontinent.

Ethnicity is an untenable criterion for a separate province. Carving out new provinces on this criterion would cause further destabilisation. If adopted, this yardstick would push Balochistan to demand some regions currently under the administrative control of Sindh and Punjab to be declared its integral part. Khyber-Pakhtunkhwa will scramble for getting the western parts of Balochistan. It will also lay claims to Mianwali and Attock of Punjab. Such reorganisation will not get Hazara the status of a new province as most of the Hindko-speaking tribes there are ethnic Pakhtuns. Eventually, the province will be happy to extend into other provinces’ regions, but it will also have to cope with the grief of losing its Saraiki-speaking areas, which will automatically gravitate towards a Saraiki province. The province of Sindh would be a scene of intense ethnic struggles.

Language will also become a problem criterion. In Pakistan, no part of the country can be declared a single-language unit. Local dialects of the major languages apart, all provinces are inhabited by people from other provinces who do not share the language of the host province or region. If it is ever accepted as the criterion for new provinces, language would most likely create unpleasant scenarios. One of the likely scenarios will be mass migration among regions and provinces thus creating the spectre of hate and ethnic atrocities. This migration will also be accompanied by painful economic displacements.

Secondly, if the minorities in any city, region or province are to be satisfied, their adopted provinces and districts have to be divided in very small units so that they get a separate province. For example, Khyber-Pakhtunkhwa and its capital, Peshawar, and cities like Chitral and Gilgit and Hindko-speaking Hazara and Saraiki-speaking Dera Ismail Khan will become small ethnic enclaves and not meet the characteristics of provinces. In the case of Khyber-Pakhtunkhwa, division on this criterion may not bring much trouble eventuality, but it certainly will spell disaster for Karachi and Hyderabad, where Urdu-speaking people are in majority but Punjabis, Sindhis, Pakhtuns and other people also live there in large numbers.

Notwithstanding the difficulties in the creation of new provinces on the abovementioned criteria, larger provinces do not help the cause of devolution of power to the grassroots level, social democratisation, public empowerment and efficient and effective public service delivery. Similarly, effective administration of a geographical unit demands that the area under its command is easily accessible and manageable for the government.

For this very reason, new provinces must be created where the seat and centre of power is close to the people being governed. Smaller provinces will improve law enforcement to protect basic rights of the people as enshrined in the Constitution and create a culture of democratic accountability. These reasons for division of provinces into smaller units are greater in the case of our country. The democratic forces may have no problem adopting this idea, nor will the establishment. In the recent past, we have observed the Musharraf regime flirting with the district governments concept. Musharraf never tired of telling all and sundry that the basic purpose of the district government system was solving people’s problems at their doorsteps and devolving power to the masses.

National development and good governance goals necessitate creation of new provinces by dividing the larger provinces into smaller ones, but the question is: what are the criteria to be adopted for creation of new provinces?

In the current scenario, the only option that seems feasible and probably acceptable to the democratic forces is declaring the administrative Divisions in all federating units as new provinces. This option would strike ethnicity, language, ethnicity, history and all other factors out of the equation. The division will also spare the people and the country of the consequences they will be made to bear otherwise. Pakistan has 27 divisions, FATA, and Azad Kashmir. This distribution has hardly been opposed by any force in the country. So declaring Divisions as provinces after dissolution of all federating units, the capital territory, FATA, Azad Kashmir and Gilgit-Baltistan into 30-or-so smaller provinces, will evoke no adverse reaction. Resultantly, the federation will be strengthened and Pakistan will become more democratic and prosperous.

The writer works for Geo TV. Email: saleem. safi@janggroup.com.pk

  1. April 27, 2010 at 4:23 am

    میاں رضا ربانی کی آئینی اصلاحات کی کمیٹی کی رپورٹ اور آئینی سفارشات کے منظر عام پر آنے سے کئی ہفتے پہلے میں نے انہی کالموں میں لکھا تھا کہ مذکورہ کمیٹی اپنی سفارشات میں صوبوں کی تشکیل نو کے سوال کو حل کرنے کیلئے بھی اقدامات کرے۔مگر فغان درویش صدا بصحرا ثابت ہوئی اور اسے درخور اعتنا نہیں سمجھا گیا۔ تاہم 18 ویں ترمیم پر مشتمل سفارشات کے مندرجات منظر عام پر آنے کے بعد صوبوں کی تشکیل نو کا سوال ملک کا ایک انتہائی اہم سوال بن کر سامنے آ گیا ہے۔ میرے خیال میں وہ وقت اب تیزی سے قریب آ رہا ہے، جب حکومت کو 19ویں ترمیم کیلئے نئے صوبوں کے قیام کیلئے کمیشن تشکیل دینا پڑے گا۔ سرائیکی صوبہ اور ہزارہ صوبہ کے قیام کا مطالبہ اب قومی مطالبہ بن گیا ہے اور ملک کی تمام پارلیمانی پارٹیوں نے نئی قومی اکائیوں کی تشکیل کے حق میں اپنی پوزیشن واضح کردی ہے۔ نئے صوبوں کے قیام کا مطالبہ علاقائی تنظیموں کا مطالبہ نہیں رہا بلکہ اب پارلیمنٹ میں موجود تمام سیاسی جماعتوں نے نئے صوبوں کے قیام کی حمایت کردی ہے اور اس سلسلے کی آخری کڑی بہاول پور میں صدر آصف علی زردری کا یہ بیان ہے کہ وہ نئے صوبوں کے مخالف نہیں بلکہ ان کے حق میں ہیں۔ قبل ازیں پاکستان مسلم لیگ (ن) کے قائد میاں نواز شریف بھی نئے صوبوں کی کھل کر حمایت کر چکے ہیں۔ پاکستان مسلم لیگ (ق) تو ہزارہ اور سرائیکی صوبوں کیلئے عملی تحریک چلا رہی ہے اور متحدہ قومی موومنٹ سرائیکی اور ہزارہ صوبوں کے منشور کے ساتھ پنجاب کے میدان میں اتر رہی ہے۔

    Nazir Leghari
    http://search.jang.com.pk/details.asp?nid=428149

  2. April 30, 2010 at 9:12 pm

    Traitor:

    Khosa rules out provinces on linguistic basis

    Wednesday, April 28, 2010
    By By our correspondent
    DERA GHAZI KHAN: Senior Adviser to the Chief Minister Sardar Zulfiqar Ali Khan Khosa has said that the PML-N can hold dialogues on the establishment of provinces on administrative grounds, however, the creation of provinces on linguistic basis will not be supported.

    He was speaking at a ceremony held to award keys of vehicles to Border Military Police and Baloch Levy at Fort Minro on Tuesday. He said both forces were well-equipped with facilities and transport so that the terrorists and miscreants could not use the hilly route for their entry into the Punjab. He said that allowances and salaries of the centuries old tribal forces had been increased besides making their service structure.

    He said that the PML-N yet had not decided about the allotment of the ticket for the by-election in PP-240, the seat vacated after the resignation of Sardar Mir Badshah Qaisrani. He handed over the keys to 28 vehicles worth Rs 750 million for Rajanpur and Dera Ghazi Khan districts to Commandant Tariq Mehmood Bukhari. He said the government wanted to wind up both tribal forces, but he made sincere efforts which became fruitful ultimately.

    Zulfiqar Khosa inaugurated a mosque at Fort Minro which was completed at a cost of Rs 3 million. Commissioner Hassan Iqbal presented a shield to Sardar Zulfiqar Ali Khan Khosa from BMP and Baloch Levy. The senior provincial adviser laid the foundation-stone of 40-bed THQ Hospital at Fort Minro.

    Addressing the ceremony, he said that the provincial government was utilising all available resources for providing latest and modern health facilities in the remote and far-flung areas. He said that free medicines were being provided at district and tehsil headquarter hospitals.

    DCO Iftikhar Ali Sahoo said that emergency rescue service would be started from next year at Fort Minro and Taunsa Sharif. SE Buildings Muhammad Saeed Tahir Sheikh said that THQ Hospital and the official residences would be completed at a cost of Rs 35 million until April 27 next year.

    http://www.thenews.com.pk/print1.asp?id=236461

    New provinces on administrative grounds only: Khosa
    Published: April 28, 2010
    Print Facebook Digg StumbleUpon Text Size
    DERA GHAZI KHAN – Senior Advisor to Punjab Chief Minister Sardar Zulfiqar Ali Khan Khosa has said that the PML-N can consider and hold dialogue over carving out more provinces on administrative grounds. However, new provinces on the linguistic basis, including Seraiki province, would not be supported.
    Addressing a ceremony held to award keys of the vehicles to Border Military Police (BMP) and Baloch Levy at Fort Minro on Tuesday, Khosa said, “Seraiki is a language and not a nation.”
    He said both the forces had been well equipped with latest facilities so as to enable it stopping the terrorists and miscreants from entering into Punjab in the hilly terrain of the region. He said allowances and salaries of centuries old tribal forces had been increased besides formulating their service structure as well.
    He said there was a time when the government was winding up both the tribal forces but he made sincere efforts, which yielded fruitful results, adding that in the past, the forces were assigned the duty of maintaining law and order in Multan, Lahore and other cities as well.

    http://www.nation.com.pk/pakistan-news-newspaper-daily-english-online/Lahore/28-Apr-2010/New-provinces-on-administrative-grounds-only-Khosa

  3. May 3, 2010 at 4:06 am

    کالم ختم ہونے کے بعد کی عرضداشت….کٹہرا …خالد مسعودخان

    جنوبی پنجاب کی محرومیوں کا جتنا خوبصورت اور موثر اظہار سرائیکی شاعری میں نظر آتا ہے اس کی مثال ملنامشکل ہے۔ اس کا تازہ اظہار ملتان میں روزنامہ جنگ کے زیراہتمام ہونے والے کل جنوبی پنجاب مشاعرے میں دیکھنے میں آیا۔

    یہ اردو، سرائیکی اور پنجابی مشاعرہ تھا جس میں ملتان، بہاولپور، ڈیرہ غازی خان، خانیوال، وہاڑی ، لودھراں، بہاولنگر، راجن پور، مظفرگڑھ اور لیہ سے پینتیس کے لگ بھگ نمائندہ شعراء نے شرکت کی۔ مشاعرے کی صدارت شاعر ، دانشور اور صحافی محمود شام نے کی جو خاص طور پر اس مشاعرے کے لیے کراچی سے آئے۔ سرائیکی شعراء نے معاشرے میں ہونے والی نا انصافیوں اور ناہمواریوں پر عمومی طورپر اور اپنے علاقے سے ہونے والی نا انصافیوں پر خصوصی طورپربڑے بھر پور اور موثر انداز میں شاعری سنا کر نہ صرف داد وصول کی بلکہ سامعین میں شعوری بیداری پیدا کرنے میں بھر پور حصہ ڈالا۔ یہ ایک بھرپور مشاعرہ تھا۔

    مشاعرہ ختم ہونے کے بعد جب ہال سے باہر نکلا تو ایک سرائیکی شاعر مرے پاس آکر کہنے لگا کہ آپ سرائیکی میں شاعری کیوں نہیں کرتے؟ پہلے تو میرا دل چاہا کہ میں اس سے پوچھوں کہ آپ اردو یا پنجابی میں شاعری کیوں نہیں کر تے لیکن میں نے اپنے زبان پر آنے والے جوابی سوال کو روک لیا اور اس سے کہا کہ میں پوری دنیا میں جہاں بھی مشاعرے پڑھنے جاتا ہوں ملتان کی نمائندگی کر تا ہوں اور یہ نمائندگی میں کسی مجبوری کے تحت نہیں بلکہ خوشی اور فخر سے کر تا ہوں ۔ کیا یہ کافی نہیں کہ میں ملتان کے حوالے سے یعنی اپنے ” وسیب“ کے حوالے سے جانا اور پہچانا جاتا ہوں۔ وہ کہنے لگا اگر آپ سرائیکی زبان میں شعر نہیں کہتے تو آپ ملتان کی نہیں بلکہ ”تخت لاہور“ کی نمائندگی کر تے ہیں۔

    میں نے اس سے پوچھا کیا کوئی شخص پچھلی چار پشتوں سے ملتان میں رہنے کے باوجود محض اس لیے اس وسیب کا بیٹا نہیں بن سکتا کہ وہ سرائیکی میں شاعری نہیں کرتا؟ اس سرائیکی شاعر سے یہ ساری گفتگو سرائیکی زبان میں ہو رہی تھی۔ وہ کہنے لگا جب تک آپ بطور شاعر سرائیکی میں شاعری نہیں کر تے نہ تو آپ اس وسیب کے بیٹے ہیں اور نہ ہی ملتان کے نمائندہ ہیں بلکہ آپ صرف اور صرف تخت لاہور کے نمائندہ ہیں۔

    میں نے اسے کہا کہ ویسے تو مجھے آپ کی جانب سے کسی سند کی ضرورت نہیں تاہم ریکارڈ کی درستی کے لیے آپ کو بتانا چاہتا ہوں کہ میرے خاندان کی پانچ نسلیں ملتان میں پاک مائی کے قبرستان میں دفن ہیں اور میرا خاندان ملتان میں پاکستان کے قیام میں ہونے والی تاریخ کی سب سے بڑی ہجرت سے بھی کہیں پہلے سے یہاں مقیم ہے اور خود میری پیدائش لفظ سرائیکی کی پیدائش سے غالباً تین چار سال قبل ہوئی تھی۔ اس سے قبل یہ زبان ملتان میں ملتانی ، بہاولپور میں ریاستی اور ڈیرہ جات میں ڈیروی کہلاتی تھی۔

    یہ درست ہے کہ یہ زبان بڑی قدیم ہے مگر جس نام کے طفیل آپ مجھے اس سرزمین پر اجنبی بناناچاہتے ہیں وہ سن انیس سو ساٹھ کی دہائی میں متعارف ہوا تھا۔ 1960ء سے قبل کسی نے بھی لفظ سرائیکی نہیں سنا تھا میں اس الفظ کے ایجاد ہونے سے پہلے اس دھرتی پر موجود تھا بھلا آپ کس طرح مجھے اس دھرتی کا باسی ہونے سے روک سکتے ہیں اور محض زبان کی بنیاد پر گزشتہ ایک صدی سے زائد عرصے سے یہاں مقیم شخص کو کس طرح بیدخل کر سکتے ہیں؟ میری پانچ نسلیں یہاں دفن ہیں۔ یہی ہماری جنم بھومی ہے اور یہی ہماری جائے تدفین ہے۔ پچھلے ایک سوسال میں ہمارے کسی بزرگ کی میت یہاں سے کہیں اور دفن ہونے کے لیے نہیں گئی ۔البتہ قبرستان میں ہمارے آبائی احاطے میں بہت سے لوگ ایسے ہیں جو مرنے کے بعد ایک لمبا سفر کرکے یہاں صرف دفن ہونے کے لیے آئے ہیں ۔

    پاکستان سے باہر موجود میرے بے شمار عزیز واقار ب ملتان میں منی آرڈر بھجواتے ہیں یہاں سے کبھی کسی نے اپنی تنخواہ یا آمدنی کا منی آرڈر کہیں ”پیچھے“ نہیں بھجوایا۔ ہم نے اور ہماری آئندہ نسلوں نے یہیں رہنا ہے اوریہیں مرنا ہے۔ ہم تب بھی یہاں تھے جب یہ متحدہ ہندوستان کا شہر تھا۔ پھر تب بھی یہیں تھے جب یہ ون یونٹ پر مشتمل مغربی پاکستان تھا۔ اب بھی یہیں ہیں جب یہ صوبہ پنجاب ہے اور تب بھی یہیں ہونگے جب یہ جنوبی پنجاب پر مشتمل (خواہ اس کا کوئی بھی نام ہو) ایک علیحدہ صوبہ ہو گا۔

    علیحدہ صوبہ اب اس علاقے کا مقدر ہے اور میں ذاتی طورپر پنجاب کی انتظامی بنیادوں پر تقسیم کا قائل ہوں۔ پنجاب کی آبادی 2009ء میں ایک اندازے کے مطابق نو کروڑ چھبیس لاکھ کے لگ بھگ ہے۔ جو پاکستان کی کل آبادی کا چھپن فیصد ہے۔ صوبہ پنجاب کی آبادی دنیا کے صرف تیرہ ممالک سے کم ہے جبکہ دنیا کے دو سو چوبیس ممالک میں سے دو سو گیارہ ممالک سے زیادہ ہے۔ پورے یورپ میں کسی بھی ملک کی آبادی صوبہ پنجاب سے زیادہ نہیں۔ فرانس کی آبادی ساڑھے چھ کروڑ کے لگ بھگ ہے تاہم اس میں انتظامی یونٹس کی تعداد چھبیس ہے۔ جرمنی میں سولہ انتظامی یونٹس ہیں لیکن پنجاب کی تقسیم پر مفاد پرست طبقہ خاموش ہو جاتا ہے۔ تاہم دوسری طرف ایک تلخ حقیقت یہ بھی ہے کہ جنوبی پنجاب میں دیگر لسانی طبقات بھی موجود ہیں جن میں پنجابی، روہتکی اور اردو بولنے والے مہاجر جو اب اس علاقے کے پکے مقیم بن چکے ہیں کے علاوہ مقامی طور پر صدیوں سے آباد جانگلی، تھلی اور میانوالی وغیرہ کے رہائشی اپنے آپ کو سرائیکی تسلیم نہیں کرتے۔ کبیرو الہ سے آگے کے لوگ اپنی علیحدہ ثقافت اور شناخت رکھتے ہیں لیکن سب سے زیادہ خوشی کی بات یہ ہے کہ ابھی اس علاقے میں انفرادی سوچ سے قطع نظر اجتماعی لسانی تعصب نظر نہیں آتا اور یہی مناسب وقت ہے کہ اس تعصب کے بھڑکنے سے قبل ہی صوبوں کی تشکیل نو کا کام شروع کر دیا جائے اور یہ تقسیم انتظامی بنیادو ں پر کی جانی چاہیے۔ سرائیکیوں کو ان کا حصہ خود بخود مل جائے گا یہ ایک ایسا ایشو ہے جس پر بہت کچھ مزید لکھا جاسکتا ہے اور لکھا جانا چاہیے اور صبر کا پیمانہ چھلکنے سے قبل کوئی عملی قدم اٹھالینا چاہیے۔

    Jang, 3 May 2010

    http://search.jang.com.pk/details.asp?nid=429637

  4. December 26, 2012 at 4:26 am

    سرائیکستان دے تریہویہ ضلعے ہک ڄغرافیائی خطہ، وادی سندھ دا بالائی میدان ، ہے۔ اے زمانہ قدیم کنوں ہک تاریخی تے ثقافتی اکائی اے۔ آثار قدیمہ گواہ ہن۔ پاکستان دے آئین دے تحت صوبائی خود مختیاری ضروری چیز اے۔ کوئی صوبہ برتر کائنی۔ لیکن موجودہ حالات وچ پنجاب دی برتری اے۔ تریہویہ ضلعیاں دے سرائیکستان بݨݨ نال صوبیاں وچ توازن پیدا تھیسی۔ سرائیکی سندھی پشتون تے بلوچاں دا استحصال مکسی۔ اگر بہاولپور صوبہ بݨدے تاں ول توازن مزید خراب تھی ویسی۔ اے اصل وچ ملک دوست تے ملک دشمن قوتاں دا مقابلہ اے۔.

  5. February 6, 2015 at 7:46 am

    Thanks for the marvelous posting! I definitely enjoyed reading it, you
    will be a great author. I will always bookmark your blog
    and will often come back later in life. I want to encourage you
    continue your great writing, have a nice holiday weekend!

  1. No trackbacks yet.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: